عدالت کا بڑا فیصلہ! اہم لیگی رہنماء کو گرفتار کرنے کا حکم ، ہلچل مچا دی

عدالت کا بڑا فیصلہ! اہم لیگی رہنماء کو گرفتار کرنے کا حکم ، ہلچل مچا دی

سرگودھا(نیوز ڈیسک)سرگودھا شہر سے مسلم لیگ ن کے رکن قومی اسمبلی چوہدری حامد حمید اورضلعی صدر وسابق پارلیمانی سیکرٹری عبدالرازاق ڈھلوں سمیت 20 کارکنوں کے وارنٹ گرفتاری جاری کر کے سول کورٹ نے تمام ملزمان کو گرفتار کرکے 29 مئی کو عدالت میں پیش کرنے کا حکم دیدیا، زرائع کے مطابق الیکشن 2018 کے نتائج کے روز
ضلع کچہری کے قریب توپ چوک میں سینکڑروں کارکنان کو جمع کر کے ہنگامہ آرائی کرنے پر تھانہ کینٹ پولیس نے مختلف دفعات کے تحت مسلم لیگ ن کے رکن قومی اسمبلی حامد حمید ، ضلعی صدر سابق ایم پی اے عبدالرازاق ڈھلوںاور تاجران سمیت 20 سے زائد کارکنوں کیخلاف مقدمہ درج کیاتھا۔ جس کی سماعت میں سول کورٹ کے جج عمر جاوید نے بار بار طلب کرنے کے باوجود عدالت میں پیش نہ ہونے مقدمہ میں ملوث مسلم لیگ ن کے ایم این اے چوہدری حامد حمید اور ضلعی صدر و سابق پارلیمانی سیکرٹری اور کارکنان سمیت تمام ملزمان کے وارنٹ گرفتاری جاری کر دیئے اور پولیس حکام کو حکم دیا کہ ملزمان کو گرفتار کرکے 29 مئی کو عدالت میں پیش کیا جائے۔دوسری جانب ایڈیشنل سیشن جج کی مقامی عدالت نے پاکستان مسلم لیگ (ن) کے مرکزی رہنما اور رکن قومی اسمبلی جاوید لطیف کے خلاف بغاوت اور اشتعال انگیزی پھیلانے کی دفعات کے تحت درج مقدمہ کی سماعت کرتے ہوئے مقدمے کی آئندہ سماعت 22 اپریل تک کے لئے ملتوی کردی ہے۔ سماعت کے موقع پر مقدمے کے ملزم جاوید لطیف لاہور ڈسٹرکٹ بار ایسوسی ایشن کے صدر ملک سرور کے جونئیر وکلاء کے ہمراہ عدالت میں پیش ہوئے۔ جاوید لطیف کے ہمراہ آنے والے وکلاء نے عدالت سے استدعا کی کہ کیونکہ ملک سرور بعض معاملات میں مصروف ہیں۔ اس لئے وہ نہیں آسکتے لہٰذا ان کا وکالت نامہ جمع کروانے اور کیس کی تیاری کے لئے انہیں مہلت دی جائے جبکہ عدالت میں موجود پراسیکیوٹر نے جاوید لطیف کے جونیئر وکلاء کی استدعا کی مخالفت کی۔ فریقین کی بحث سننے کے بعد عدالت نے جاوید لطیف کی جانب سے پیش ہونے والے جونیئر وکلاء کی استدعا منظور کرتے ہوئے انہیں 12 اپریل تک کی مہلت دے دی اور حکم دیا کہ 12 اپریل کو صبح 10 بجے فریقین عدالت میں پیش ہوں وگرنہ عدالت یکطرفہ فیصلہ سنادے گی۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں