بائیکاٹ کا  اعلان  کرنے  کے  بعد ن لیگی رہنماء پارلیمنٹ کیا   لینے آئے تھے  ؟  قوم  کی آنکھیں  کھول دینے والی خبر

بائیکاٹ کا اعلان کرنے کے بعد ن لیگی رہنماء پارلیمنٹ کیا لینے آئے تھے ؟ قوم کی آنکھیں کھول دینے والی خبر

اسلام آباد (ویب ڈیسک) وزیر اعظم عمران خان کے معاون خصوصی ڈاکٹر شہباز گل نے الزام عائد کیا ہے کہ مسلم لیگ ن کے رہنماء ایک پلان کے تحت پارلیمنٹ ہاؤس کے باہر گئے تا کہ ورکرز کے ساتھ دھینگا مشتی کریں اور ویڈیو بنائیں۔ تفصیلات کے مطابق معاون خصوصی ڈاکٹر شہباز گل نے پارلیمنٹ کے باہر واقعے پر ردعمل دیترے ہوئے کہا کہ کارکنوں نے اپنے طور پر پارلیمنٹ کے باہر اکٹھے ہونے کی کال دی تھی ، جب کہ اپوزیشن نے قومی اسمبلی کے اجلاس کے بائیکاٹ کا اعلان کیا ہوا تھا ، اس لیے اپوزیشن کے لوگ ڈراما کرنے گئے تھے جو انہوں نے کیا ، یہ ایک پلان کےتحت وہاں گئےتاکہ ورکرز کیساتھ دھینگا مشتی کریں ،ویڈیو بنائیں۔



جب ہر جانب سے، پے در پے ذلت آمیز شکست کا سامنا ہو اور اقتدار بھی ہاتھ سے جاتا دکھائی دے تو یوں دماغ کا الٹ جانا سمجھ آتا ہے۔ شاہد خاقان عباسی، احسن اقبال، مصدق ملک، مرتضی جاوید عباسی اور خصوصاً مریم اورنگزیب پر فخر ہے جنھوں نے شیروں کی طرح ووٹ چوروں اور غنڈوں کا مقابلہ کیا۔


— Maryam Nawaz Sharif (@MaryamNSharif) March 6, 2021

یاد رہے کہ پارلیمنٹ ہاؤس کے باہر پاکستان تحریک انصاف کے کارکنان کے ساتھ ہاتھا پائی کے دوران مسلم لیگ ن کے رہنما احسن اقبال کو جوتا پڑگیا ، پارلیمنٹ ہاؤس کے باہر کشیدگی کے دوران پی ٹی آئی کارکنوں نے مسلم لیگ ن کے رہنماؤں کو اس وقت گھیر لیا ، جب مسلم لیگ (ن) کے رہنما سابق وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی ، ترجمان ن لیگ مریم اورنگزیب ، سابق وفاقی وزیر احسن اقبال اور دیگر اسلام آباد میں میڈیا سے گفتگو کررہے تھے کہ اس دوران تحریک انصاف کے کارکنان کی بڑی تعداد بھی ریڈ زون میں پہنچ گئی ، پی ٹی آئی ارکان نے عمران خان کی حمایت میں پلے کارڈ اٹھا رکھے تھے ، اس دوران پی ٹی آئی کارکنوں کا بینرز اٹھا کر اپوزیشن کے خلاف نعرے بازی کی۔


بتایا گیا ہے کہ پی ٹی آئی کارکنان اور مسلم لیگ ن کے رہنماؤں کے درمیان ہاتھا پائی بھی ہوئی جس میں لیگی رہنما مصدق ملک اور شاہد خاقان عباسی بھی پی ٹی آئی کارکنان سے دست و گریباں ہوگئے ، اس دوران شدید تلخ کلامی بھی ہوئی ، پی ٹی آئی کارکنوں اور مصدق ملک کے ایک دوسرے کو دھکے بھی دیے ، جس کے بعد ن لیگی کارکنان نے اپنے رہنماؤں کو حفاظتی حصار میں لے لیا جب کہ اس دوران پی ٹی آئی کارکنان کی طرف سے ایک جوتا بھی اچھالا گیا جو کہ مسلم لیگ ن کے رہنما احسن اقبال کے سر پر لگا۔



بعد ازاں اس پر ردعمل دیتے ہوئے مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز نے کہا ہے کہ جب ہر جانب سے پے در پے ذلت آمیز شکست کا سامنا ہو اور اقتدار بھی ہاتھ سے جاتا دکھائی دے تو یوں دماغ کا الٹ جانا سمجھ آتا ہے۔


سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر جاری کیے گئے اپنے ایک بیان میں پارلیمنٹ ہاؤس کے باہر مسلم لیگ ن کے رہنماؤں کی میڈیا سے گفتگو کے دوران ہونے والی کشیدگی اور بدمزگی پر تبصرہ کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ شاہد خاقان عباسی ، احسن اقبال ، مصدق ملک ، مرتضی جاوید عباسی اور خصوصاً مریم اورنگزیب پر فخر ہے جنہوں نے شیروں کی طرح ووٹ چوروں اور غنڈوں کا مقابلہ کیا۔





50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں