حکومت کی مدد سے اپوزیشن لیڈر بننے والو معافی مانگو ورنہ ۔۔۔۔۔۔ شاہد خاقان عباسی نے بھی کسر نہ چھوڑی ، اختلاف کو انتہا تک پہنچا دیا گیا

حکومت کی مدد سے اپوزیشن لیڈر بننے والو معافی مانگو ورنہ ۔۔۔۔۔۔ شاہد خاقان عباسی نے بھی کسر نہ چھوڑی ، اختلاف کو انتہا تک پہنچا دیا گیا

کراچی (ویب ڈیسک) اپوزیشن اتحاد پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) کے جنرل سیکرٹری و سابق وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ پیپلز پارٹی کے سینٹرل ایگزیکٹو کمیٹی (سی ای سی) کے اجلاس میں میرا خط پھاڑ کر پھینکا گیا ہے تو میرا جواب بھی ہے خدا حافظ، حکومت

کی مدد سے اپوزیشن لیڈر بننے والے معافی مانگیں۔ ایک انٹرویو میں شاہد خاقان عباسی کا کہنا تھاکہ معافی کس بات کی؟ مضحکہ خیز باتیں نہ کریں، بلاول کو ذمہ داری سے بات کرنی چاہیے، تماشا نہ لگائیں، بلاول نے جوباتیں کی ہیں اس سے اعتماد بحال نہیں ہوگا۔ شاہد خاقان عباسی کا کہنا تھا کہ پیپلز پارٹی ہمیں وضاحت دیتی اور اپنی مجبوری بتاتی کہ اس کوکرسی چاہیے تھی، جو جماعت اپنی زبان سے پھر جائے وہ پی ڈی ایم میں نہیں رہ سکتی۔ پیپلز پارٹی کو پی ڈی ایم میں رہنا ہے تو اپنا اعتماد بحال کرے، میرا خط پھاڑ کر پھینکا گیا ہے تومیرا جواب بھی ہے خدا حافظ۔ ان کا کہنا تھا کہ پی ڈی ایم کا اگلا اجلاس مولانا فضل الرحمن طلب کریں گے، اب پی ڈی ایم بیٹھ کرنئی حکمت عملی بنائے گی۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں