این اے 75 ڈسکہ ضمنی الیکشن: 25 فیصد پولنگ اسٹیشنز کے غیر سرکاری غیر حتمی نتائج سامنے آگئے، کس   کو برتری حاصل ؟ تازہ ترین خبر

این اے 75 ڈسکہ ضمنی الیکشن: 25 فیصد پولنگ اسٹیشنز کے غیر سرکاری غیر حتمی نتائج سامنے آگئے، کس کو برتری حاصل ؟ تازہ ترین خبر

ڈسکہ (ویب ڈیسک) این اے 75 ڈسکہ ضمنی الیکشن، 25 فیصد پولنگ اسٹیشنز کے غیر سرکاری غیر حتمی نتائج سامنے آگئے۔ تفصیلات کے مطابق حالیہ کچھ عرصے کے دوران سب سے زیادہ اہمیت اختیار کر جانے والے پنجاب کے حلقہ این اے 75 میں دوبارہ ضمنی الیکشن کے انعقاد کے بعد غیر سرکاری غیر حتمی نتائج

آنے کا سلسلہ جاری ہے۔ حلقے کی دونوں بڑی جماعتوں تحریک انصاف اور ن لیگ کے درمیان کانٹے دار مقابلہ جاری ہے۔ذرائع کے مطابق ن لیگ کی حلقے کے شہری علاقے جبکہ تحریک انصاف کو دیہی علاقے میں پوزیشن مضبوط ہے۔ جبکہ میڈیا رپورٹس کے مطابق اب تک کل 25 فیصد پولنگ اسٹیشنز کے غیر سرکاری غیر حتمی نتائج سامنے آ چکے، جن کے مطابق ن لیگ کی نوشین افتخار نے 24 ہزار سے زائد ووٹ حاصل کر لیے ہیں، جبکہ تحریک انصاف کے اسجد ملہی نے اب تک 17 ہزار سے زائد ووٹ حاصل کیے ہیں۔واضح رہے قومی اسمبلی کے حلقہ 75 ڈسکہ میں ضمنی انتخاب کے لیے پولنگ کا عمل ہوا، پولنگ صبح 8 بجے بغیر کسی وقفے کے شام 5 بجے تک جاری رہی۔ ضمنی انتخاب کے معرکے میں پاکستان تحریک انصاف کے علی اسجد ملہی اور پاکستان مسلم لیگ (ن) کی نوشین افتخار کے درمیان مقابلے میں عوام نے ووٹ کاسٹ کیے۔ قومی اسمبلی کے حلقہ 75 ڈسکہ کے ضمنی انتخاب میں تحریک انصاف کے امیدوار علی اسجد ملہی نے اپنا ووٹ کاسٹ ہی نہیں کیا، اسجد ملہی 2 بار اپنے آبائی حلقے میں آئے لیکن ووٹ کاسٹ نہیں کیا۔اس کے برعکس (ن) لیگی امیدوار نوشین افتخار نے اپنا ووٹ علی الصبح ہی کاسٹ کردیا تھا۔ دوسری جانب 5 بجے پولنگ کا وقت ختم ہونے کے بعد ووٹوں کی گنتی کا عمل جاری ہے، حلقے میں ووٹرز کی مجموعی تعداد 4 لاکھ 94 ہزارہے جن کے لیے 360 پولنگ اسٹیشنز قائم کیے گئے، جن میں سے 47 کو حساس قرار دیا گیا۔ ضمنی انتخاب کے دوران حلقے میں عام تعطیل ہے جبکہ امن و امان برقرار رکھنے کے لیے سیکورٹی کے انتہائی سخت اقدامات اٹھائے گئے۔اور پولیس کے 4 ہزار سے زائد اور رینجرز کے ایک ہزار سے زائد اہلکار تعینات کیے گئے۔ اس کے علاوہ پاک فوج کی 10 ٹیمیں کوئیک رسپانس فورس کے طور پر موجود رہیں گی ضمنی انتخاب کے موقع پر حلقے میں دفعہ 144 نافذ کی گئی۔ جس کے باعث لائسنس یا بغیر لائسنس یافتہ اسلحہ کی نمائش پر پابندی کے باعث کوئی فائرنگ کے واقعات نہیں ہوئے۔ شفاف اور پرامن انتخاب کے لیے چیف الیکشن کمشنر خود انتخاب کی نگرانی کی۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں